سندھی مہاجر سیاست

پیپلزپارٹی پارلیمنٹرین کے صدر آصف علی زرداری کو یہ معلوم ہے کہ پنجاب کے بغیر پاکستان کی صدارت یا وزارت عظمیٰ کا حصول مشکل ہے۔ انہوں نے اپنی پوری توجہ پنجاب پر مرکوز کردی ہے۔ وہ جب کہتے ہیں کہ انہیں سندھ سے پہچان ملی اور ان کا شمار بلوچوں میں ہوتا ہے۔ یہ اس بات کا اشارہ ہے کہ وفاق اور اسٹیبلشمنٹ سندھ اور بلوچستان کے لیئے ان سے بات کرے۔ وہ ایک بار پھر 1970ء والی پوزیشن پیدا کردینا چاہتے ہیں جب ان کے سسر ذولفقار علی بھٹو پنجاب کی مجبوری بن گئے تھے۔ پیپلز پارٹی نے پنجاب سے ہی جنم لیا جس کی پیدائش کو 50 سال ہوگئے ہیں اور یہ سال اس کی گولڈن جوبلی کا ہے۔
1970ء کے عام انتخابات میں پیپلزپارٹی نے پنجاب سے اکثریت حاصل کی تھی جو 1972 ء میں اس کے اقتدار کی بنیاد بنی تھی۔ رواں سال پیپلزپارٹی کی گولڈن جوبلی کا سال ہے۔ پچاس سال کے اس سفر میں بھٹو خاندان کے 5 افراد دنیا سے رخصت ہوچکے ہیں۔ ذوالفقار علی بھٹو کو پھانسی دے دی گئی۔ ان کے بیٹے شاھنواز بھٹو کی فرانس میں پراسرار موت واقع ہوئی۔ دوسرے صاحبزادے مرتضیٰ بھٹو کو کراچی کی شارع پر گھر کے قریب کئی ساتھیوں سمیت پولیس نے مار دیا۔ بیگم نصرت بھٹو کا دبئی میں کسمپرسی کی حالت میں انتقال ہوا اور میت کراچی لائی گئی جبکہ تیسری بار وزیراعظم بننے کی خواہش دل میں لیئے بینظیربھٹو کو راولپنڈی میں شہید کردیا گیا۔ 4 اپریل کو ذوالفقار علی بھٹو کی 38 ویں برسی لاڑکانہ کے گائوں گڑھی خدا بخش میں منائی گئی ہے جہاں ماضی کی طرح شرکاء میں زیادہ جوش وخروش نہیں تھا اور ان کی تعداد بھی کم تھی۔ برسی کے اجتماع سے خطاب میں پیپلزپارٹی پارلیمنٹرین کے صدر آصف علی زرداری نے اپنے مخصوص لہجہ میں کہاکہ 15 دن پنجاب میں رہا تو شیر اور بلے (نواز شریف اور عمران خان کی طرف اشارہ) کا برا حال ہوگیا۔ اب ہر ڈویژن اور ضلع میں جائوں گا جبکہ بلاول نے میاں نواز شریف کو رخصتی کی نوید سناتے ہوئے کہاکہ اسی سال الیکشن ہوں گے۔ جن میں پیپلزپارٹی کامیاب ہوگی۔ آصف علی زرداری ایک قدم آگے بڑھ کر بولے کہ پہلے وہ سینیٹ مین اپنا چیئرمین لائے تھے اور اب اپنا وزیراعظم لائیں گے۔ ان کی ہتھکڑی کھل چکی ہے۔ آصف زرداری اور بلاول بھٹو زرداری کی پنجاب پر یلغار کا مسلم لیگ (ن) سندھ میں جواب دے رہی ہے۔کچھ عرصہ قبل تک سندھ سے (ن) لیگ کی عدم دلچسپی کے باعث کئی ارکان اسمبلی اور مقامی رہنما نواز لیگ سے الگ ہوکر پیپلزپارٹی میں شمولیت اختیار کرچکے ہیں۔ سندھ کی مخصوص سیاست تھانیدار’ پٹواری’ مختارکار اور ڈپٹی کمشنروں کے گرد گھومتی ہے۔ حلقۂ انتخاب میں اپنا اثرورسوخ اور ووٹ بینک قائم رکھنے کے لیئے ان سرکاری افسران سے رابطہ اور اچھے تعلقات ضروری تصور کیئے جاتے ہیں۔ ان کی حمایت کے بغیر علاقے میں چلنا پھرنا اور کام نکالنا دشوار ہوجاتا ہے۔
سندھ کے سیاستدان اور بالخصوص حکومت”یس مین” افسروں کو پسند کرتے ہیں۔
آئی جی سندھ پولیس اے ڈی خواجہ کے خلاف وزیر اعلیٰ’ سندھ کابینہ اور پوری صوبائی حکومت صف آرا ہوگئے ہیں اس سے قبل بھی اے ڈی خواجہ کا تبادلہ ہوا تو انہوں نے سندھ ہائی کورٹ سے حکم امتناعی حاصل کرلیا تھا۔ اس حکمنامہ کی موجودگی میں چیف سیکریٹری نے ان کے تبادلے اور غلام قادر تھیبو کو قائم مقام آئی جی بنانے کا نوٹیفکیشن جاری کردیا۔ اے ڈی خواجہ اس حکم کو غیر قانونی تصور کرتے ہوئے پھر عدالت چلے گئے تو دوسرے ہی دن سندھ کابینہ نے ان کے تبادلے کا فیصلہ سنادیا۔ اے ڈی خواجہ کہتے ہیں کہ وہ عدالتی حکم کے پابند ہیں اور یوں سندھ حکومت اور خواجہ صاحب کی کشمکش جاری ہے۔ سندھ کی سیاست میں پولیس کا بڑا عمل دخل ہے۔ اے ڈی خواجہ سندھ حکومت کا ہر جائز و ناجائز حکم ماننے کے لیئے تیار نہیں ہیں اور یہی تنازعہ ہے۔ اپنے اصولی موقف اور عوام کے ساتھ پولیس کا ”فرینڈلی” رشتہ قائم کرنے کے سبب اے ڈی خواجہ صوبے کے عوام میں مقبول بھی ہیں اور جہاں جاتے ہیں لوگ والہانہ ان کا استقبال کرتے ہیں۔
سندھ حکومت کو ”یس مین” کی ضرورت ہے اور اس کسوٹی پر اے ڈی خواجہ پورا نہیں اترتے۔ انہیں ”ناپسندیدہ” کہا جارہا ہے۔سندھ کی سیاست پر غلبہ حاصل کرنے کی دوڑ میں پی ٹی آئی اورپیپلزپارٹی کے علاوہ مسلم لیگ (ن) اور جماعت اسلامی بھی شامل ہیں۔ مہاجر سیاست ٹکڑوں میں تقسیم ہے۔ مصطفےٰ کمال اور انیس احمد قائم خانی کی پاک سرزمین پارٹی’ ڈاکٹر فاروق ستار کی ایم کیو ایم پاکستان اور آفاق احمد کی مہاجر قومی موومنٹ اپنا اپنا ووٹ بینک مضبوط کرنے کیلئے متحرک ہیں جبکہ ایم کیو ایم لندن ریاستی آپریشن کی زد میں ہے۔ آل پاکستان مسلم لیگ کے سربراہ سابق صدر پاکستان پرویز مشرف نے اب تمام مہاجروں کو یکجا کرنے کی خواہش ظاہر کی ہے۔ وہ مہاجروں کو بنیاد بناکر ملک گیر سیاست کے خواہاں ہیںاور مہاجروں کو قومی دھارے میں شامل رکھنا چاہتے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ 1947 ء میں بھارت سے ہجرت کرنے والے صرف سندھ میں ہی نہیں ملتان’ لاہور’ پشاور اور کوئٹہ سمیت ملک کے مختلف علاقوں میں آباد ہوئے تھے۔ یہ وہ لوگ ہیں جن کے آباواجداد نے پاکستان بنایا اور اس کے لیئے بیش بہا قربانیاں دی ہیں۔ اگرچہ ملک گیر بنیاد پر ان سب کو ایک جماعت کے پرچم تلے جمع کردیا جائے تو آج بھی یہ پاکستان کے لیئے بہت کام کرسکتے ہیں۔ پرویزمشرف پاکستان واپس آکر مہاجروں کو اکٹھا کرنے کا فریضہ سر انجام دینا چاہتے ہیں اور اس کے لیئے ضروری ہے کہ ان کے خلاف جعلی مقدمات ختم کیئے جائیں۔ سندھ کی سیاست میں ”سندھی مہاجر” بنیاد پر سیاست کا غلبہ رہا ہے۔ سرکاری ملازمتیں ہوں یا کالج’ یونیورسٹیز میں داخلے’ اسمبلیاں ہوں یا بلدیاتی ادارے’ یہ تفریق ہر جگہ کار فرمارہی ہے۔
اس کی مقدار میں کمی بیشی حالات پر منحصر ہوتی ہے لیکن انتخابات پر اثر انداز ضرور ہوتی ہے۔ 1984 ء میں ایم کیوایم کی تشکیل سے قبل بھی یہ تقسیم موجود تھی جسے ایم کیو ایم نے وسعت اور گہرائی عطا کی۔ حتیٰ کہ حیدرآباد جیسا شہر بھی اس لسانی تقسیم کا شکار ہوکر دو حصوں میں تقسیم ہوگیا۔ اس کا تمام فائدہ بیورو کریسی اور اقتدار میں شریک جماعتوں نے اٹھایا۔ تعمیر و ترقی کے لیئے مختص فنڈز پر ہاتھ صاف کیا۔ ان دنوں کراچی میں کلفٹن کے ساحل پر واقع باغ ابن قاسم کا تنازعہ زوروں پر ہے۔ یہ وسیع و عریض اور خوبصورت باغ 130 ایکڑ پر محیط ہے۔ اسے سابق صدر مملکت پرویز مشرف کے دور میں بنایا گیا سابق گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد اور اس وقت میئر کراچی مصطفےٰ کمال کو یہ ذمہ داری تفویضی کی گئی کہ وہ اس باغ کی نگرانی اور دیکھ بھال ذاتی طور پر کریں گے۔
2008ء میں پرویز مشرف حکومت رخصت ہوئی۔ پیپلزپارٹی کی حکومت قائم ہوئی تو حالات بدل گئے۔ باغ ابن قاسم کچرے کا ڈھیر بن گیا۔
گزشتہ 9 سال کے دوران پارک کی دیکھ بھال کے نام پر 25 کروڑ روپے سے زائد غبن کرلیئے گئے۔ پانچ پرائیویٹ پارٹیوں کو ٹھیکے پر دے کر ان سے بھاری رقم وصول کی گئی اور یوں ایک ارب روپے کی لاگت سے تیار ہونے والا یہ پارک برباد ہوگیا۔ سندھ حکومت نے اس کا نیا ٹھیکہ معروف بلڈر اور لینڈ ڈیولپر بحریہ ٹائون کے چیئرمین ملک ریاض حسین کو دیا گیا تھا۔ اس کے لیئے ایک کروڑ 73 لاکھ 25 ہزار روپے کی رقم بھی مختص کی گئی تھی جو انہوں نے تو وصول نہیں کی لیکن ان کے نام سے غبن ہونے والی تھی کہ شور مچ گیا۔ ایم کیو ایم پاکستان اور میئر کراچی وسیم اختر نے اعتراض اٹھادیا۔
ملک ریاض حسین نے پروجیکٹ پر کام روک دیا۔ بعض حلقوں کا کہنا ہے کہ ملک ریاض حسین کی پشت پر موجود لوگ پارک کی قیمتی اراضی پر قبضہ کرنا چاہتے تھے۔ اس زمین کی موجودہ قیمت کم از کم 15 لاکھ روپے گزہے۔
1843 ء میں سندھ فتح کرنے والے برطانوی فوج کے افسرچارلس نیپیئرنے کراچی کو دیکھ کر اسے ”مشرق کا موتی” قرار دیا تھا۔ آج یہ خوبصورت شہر کچرے کا ڈھیر بن چکا ہے۔ سیاسی لڑائیوں اور وسائل پر قبضہ کی جنگ نے اس عظیم شہر کو تباہ کردیا ہے۔ وزیر اعلیٰ مراد علی شاہ نے گجرات میں پی پی پنجاب کے صدر چوہدری قمرالزمان کی صاحبزادی کی شادی میں کہاہے کہ ہم متحدہ سے کراچی چھین لیں گے۔
ان کا کہنا ہے کہ کراچی ایم کیو ایم کے ہاتھ سے نکل چکا ہے۔ ایم کیو ایم کے سربراہ ڈاکٹر فاروق ستار کا سندھ حکومت کے بارے میں جاری کردہ وائٹ پیپر بوکھلاہٹ کا نتیجہ ہے۔ ایم کیو ایم پاکستان اب بھی سندھ کی دوسری بڑی پارلیمانی طاقت ہے۔ اس کے پاس قومی اسمبلی’ سینیٹ اور سندھ اسمبلی میں بھرپور نمائندگی ہے۔ مناسب تو یہی ہے کہ اس کی طاقت کو تسلیم کرکے کراچی میں اس کے میئر وسیم اختر کو کام کرنے کا بھرپور اور آزادانہ موقع دیا جائے۔ باہمی لڑائی اور چپقلش میں تو سب کچھ تباہ ہو جائے گا۔
مشہور امریکی مصنف ڈیل کارنپگی نے کتاب لکھی تھی ”میٹھے بول میں جادوہے”لیکن جب انسان اونچا بولنے لگے تو مسائل جنم لیتے ہیں۔ 5 ارب روپے کرپشن کے ملزم شرجیل میمن کو ”اونچا” بولنے پر اسپتال جانا پڑا اور آصف علی زرداری کے 3 قریبی ساتھی لاپتہ ہو گئے۔ تھوڑے کو بہت کچھ سمجھ لینا چاہئے۔ اسٹیٹ کی اتھارٹی سے کوئی نہیں لڑسکتا۔ الطاف حسین کی ایم کیو ایم کا کئی حصوں میں تقسیم ہونا آنکھیں کھولنے کے لیئے کافی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں