بھارت میں انٹر میڈیٹ امتحان میں چیکنگ کی آڑ میں امتحانی عملہ شرم و حیا کی سب حدیں پھلانگ گیا

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک)بھارتی ریاست بہار میں ایک امتحانی مرکز میں بوٹیا مافیا کے خلاف آپریشن کے نام تلاشی کی آڑ میں بے حیائی اور بے شرمی کی وہ تاریخ رقم کر دی گئی کہ پورے بھارت کا سر شرم سے جھک جائے گا ۔ بہار کے ایک سکول میں جہاں انٹرمیڈیٹ کے امتحانات ہورہے تھے ۔ امتحانی بورڈ کی خواتین منتظمین کا ایک ٹولہ ایک ایک کرکے لڑکیوں کی جامع تلاشی لینے لگا۔ اور امتحانی مراکز میں لگے ہوئے کیمروں کی پرواہ کیے بغیر ان خواتین نے لڑکیوں کے جسم کے چپے چپے سے کپڑے ہٹاکر انھیں ٹٹولنا شروع کر دیا۔ اور مجبوری کے عالم میں امتحان دینے کےلئے آنے والی لڑکیاں ایک مجسمے کی طرح ان خواتین چیکرز کے سامنے کھڑی انھیں اپنا کام کرنے دیتی رہیں۔ خواتین چیکرز نے بڑی ہی دیدہ دلیری اور بے باکی کا مظاہرہ کرتے ہوئے امتحان دینے آئی لڑکیوں کے کپڑوں کے اندر ہاتھ ڈال ڈال کر ان سب جگہنو کو چھان مارا جہاں نقل کا مواد چھپائے جانے کے بال برابر بھی امکانات موجود تھے۔بہار کے امتحانی مرکز میں پیش آنے والے اس واقعے نے اس دعوے کی قلعی کھول دی ہے کہ بھارت میں پردے اور شرم وحیا کو بلند ترین انسانی اقدار میں سے ایک ہونے کا درجہ حاصل ہے۔