ڈی جی آئی بی کی جانب سے جے آئی ٹی اراکین کے الزامات پر سپریم کورٹ میں جواب جمع

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک ) سپریم کورٹ کی جانب سے پانامہ لیکس کیس پر بنائی گئی جے آئی ٹی کی جانب سے تحقیقات میں رکاوٹ بننے کے الزامات لگائے جانے پر ملک کے سب سے اہم تحقیقاتی ادارے انٹیلی بیورو کے سربراہ آفتاب سلطان نے اپنا جواب سپریم کورٹ میں جمع کروا دیا ہے۔ ڈی جی آئی بی آفتاب سلطان نے سپریم کورٹ کے سامنے اعتراف کیا ہے کہ پانامہ کیس کی تحقیقات کرنے والی جے آئی ٹی کے اراکین کا ڈیٹا جمع کیا جاتا رہا ہے۔ آفتاب سلطان کی جانب سے داخل کیے گئے جواب میں کہا گیا ہے کہ آئی بی ایک اہم ادارہ ہے اور کیونکہ پانامہ لیکس کیس ایک ایسا بڑا کیس ہے جس کے اثرات ملکی سیاست پر کافی گہرے ہیں اس لیے جے آئی ٹی اراکین کے کوائف اور دیگر تفصیلات کو جمع کیا جاتا رہا۔ ڈی جی آئی بی نے ان الزامات کو مسترد کیا کہ آئی جی نے جے آئی ٹی کی تحقیقات میں رکاوٹ بننے کی کوئی کوشش کی ۔ یا جے آئی ٹی کے رکن بلال رسول اور ان کی اہلیہ کو ہراساں کیا جاتارہا۔ واضح رہے کہ جے آئی ٹی نے اراکین نے تحقیقاتی عمل میں رکاوٹ ڈالنے، ہراساں کیے جانے اورسرکاری دستاویزات میں ردو بدل کی شکایات کی تھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں