پانامہ جے آئی ٹی رپورٹ سپریم کورٹ کیا فیصلہ سنانے والی ہے ،اعتزاز احسن نے اشارہ دیدیا

لاہور، اسلام آباد، کراچی (ویب ڈیسک) پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنما سنیٹر اعتزاز احسن نے کہا ہے کہ سیاسی حالات سمیت ملک کی مجموعی صورتحال پر گہری نظر ہے، حکمران جماعت پانامہ جے آئی ٹی کے معاملے پر ہر روز نیا پتہ پھینک رہی ہے لیکن ہر چال اور تدبیر ان کے اپنے گلے پڑ رہی ہے ۔ ایک انٹر ویو میں انہوں نے کہا کہ وفاقی وزراءایک منصوبے کے تحت آنکھوں پر پٹی باندھ کر جے آئی ٹی کیخلاف بیانات داغ رہے ہیں جس ے ان کا اصل چہر ہ قوم کے سامنے بے نقاب ہو رہا ہے۔ انہوںنے کہا کہ پہلے دن ہی کہہ چکا ہوں کہ پانامہ لیکس حکمرانوں کے گلے کا طوق بن چکا ہے اور یہ کسی صورت بھی اس سے پیچھا نہیں چھڑا سکتے ۔اعتزاز احسن نے کہا کہ وفاقی وزراءنے ریاست کا حلف اٹھایا ہے لیکن بد قسمتی سے سار ے وزراءاپنی قیادت کی کرپشن بچانے میں لگے ہوئے ہیں ۔ دوسروں پر کرپشن کے بے بنیاد الزامات لگاکر پگڑیاںں اچھالنے والے اربوں کی کرپشن پر آج خود پکڑ میںآ چکے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ حکمران خاندان اور وزراءایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت ایسی فضاءکو فروغ دے رہے ہیںجس سے افرا تفری کا گماں ہوں لیکن عوام ان کی کسی چال کو کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔ پیپلزپارٹی کے رہنما قمرالزماں کائرہ نے کہا کہ پانامہ کیس میں سپریم کورٹ کے ججوں کی کارروائی کے دوران مسلم لیگ ن کے وزراءکی زبان بہت ہتک آمیز تھی اور جب جے آئی ٹی کی کارروائی شروع ہوئی تو ابتدا میں انہوں نے مٹھائی بانٹی لیکن جب ان سے سوالوں کا سلسلہ شروع ہوا تو ان لوگوںکو پتہ چلا کہ آخر ہوا کیا ہے تو ان لوگوں نے شور کرنا شروع کر دیا اور اس کیس کو سازش کہنا شروع کر داب یہ مانیں یا نہ مانیں جے آئی ٹی کو اس سے فرق نہیں پڑتا جے آئی ٹی نے اپنی رپورٹ سپریم کرٹ میں جمع کرا دینی ہے وزیراعظم کو اب جانا ہے لیکن اب یہ شہبازشریف اوار مریم نواز کو بچانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ پیپلزپارٹی لاہور کے صدر عزیز الرحمن چن نے کہا ہے کہ پیپلزپارٹی مسلم لیگ ن کو بادشاہت قائم نہیں کرنے دے گی پچھلے ادوار میں وزیراعظم نوازشریف اور امیر المومنین بننے کے خواب میں جدہ پہنچ گئے تھے انہوہں نے ہوش کے ناخن نہ لئے تو اس بار جیل سے جدہ نہیں بلکہ تختہ دار پر جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت سپریم کورٹ کے لئے دھمکی آمیز رویے سے گریز کرے۔ پیپلزپارٹی نے مسلم لیگ (ن) کے وزراءکی جانب سے ہفتہ کے روز جے آئی ٹی کی رپورٹ کو مسترد کرنے کی دھمکیوں کہ اگر قطری شہزادے کا بیان پاناما لیکس میں نہیں ریکارڈ کیا گیا تو وہ اس رپورٹ کو مسترد کر دیں گے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکمران خاندان ابتدا ہی سے بھاگنا چا رہا تھا۔ سابق چیرمین سینٹ اور پاکستان پیپلز پارٹی کے مر کزی سیکرٹری جنرل سید نیر حسین بخاری نے وفاقی وزیر دفاع کے ہمراہ وفاقی وزراء کی قومی حساس ادارے کی ساکھ متاثر کرنے کی کوشش اور حکومتی وزرا کی سرکاری خرچ پر سرکاری ملازمین کو خطاب میں ٹکراو اور تصادم کی فضائ کوخطرناک قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ آئینی عہدوں اور سرکاری فرائض کے قانونی تضاضوں کو مد نظر رکھا جانا چاہیے ممبران پارلیمنٹ اور بلخصوص اراکین پنجاب اسمبلی کی پانامہ پیپرز سے لاتعلقی دراصل جعلی شہزادوں کے تخت لاہور کے گرنے کااعلان ہے۔ سابق وزیر مملکت انصاف و پارلیمانی امور مہرین انور راجہ نے کہا ہے کہ پنجاب میں ہمارے کارکنان پرپولیس تشدد کر رہی ہے، حکومت پیپلزپارٹی کے کارکنان سے خوف زدہ ہے، سابق ایم پی اے امجد میو پر تشدد کی پرزور مذمت کرتے ہیں۔