انسداد تجاوزات آپریشن، متاثرین کو متبادل فراہم کیا جائے گا، میئر کراچی

کراچی: میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ انسداد تجاوزات آپریشن سپریم کورٹ کے حکم پر جاری ہے، نالوں اور پارکس پر بنائی جانے والی مارکیٹیں ختم کی جائیں گی، جن کاکاروبارمتاثرہواہےان کومتبادل دیں گے اور ایمپریس مارکیٹ کے متاثرین کو شہاب الدین مارکیٹ میں جگہ فراہم کی جائے گی۔اے آر وائی نیوز سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے میئر کراچی کا کہنا تھا کہ عوامی مقامات پر موجود تمام تجاوزات کو سپریم کورٹ کے حکم پر ختم کیا جائے گا، تمام فٹ پاتھ مارکیٹس کلیئر کرائے جائیں گے۔اُن کا کہنا تھا کہ سڑکوں پرکوئی ریسٹورنٹ ہویاجنریٹرہو سب کلیئرکیاجائےگا، غیر قانونی عمارتوں کے خلاف کارروائی کرنا کراچی ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی ذمہ داری ہے، پولیس دوبارہ تجاوزات بنانے والوں کے خلاف کارروائی کرے گی۔ میئر کراچی کا کہنا تھا کہ ’جن علاقوں یا بازاروں میں آپریشن کیا گیا وہاں دوبارہ تجاوزات قائم نہیں کی گئی بلکہ پتھارے لگائےگئے، تجاوزات کی دوبارہ تعمیر نہیں ہونے گیں گے، سپریم کورٹ کےحکم کی تعمیل میں زیرو ٹالرنس کی پالیسی اختیارکی ہے‘۔وسیم اختر کا کہنا تھا کہ ’کراچی میں 40سے45سال کابگاڑ ہے،جس کے تمام متعلقہ ادارے ذمہ دار ہیں، تجاوزات کے خلاف اگر ماضی میں کارروائی نہیں کی گئی تو اس میں محکموں کی غلطیاں ہیں، ہم کسی ریسٹورنٹ کے خلاف نہیں ہیں بلکہ عدالتی حکم پر کام کررہے ہیں‘۔میئر کراچی نے اعلان کیا کہ ’جن کا کاروبار متاثرہوا انہیں متبادل جگہ فراہم کی جائے گی، شہری حکومت کے پاس کچھ جگہیں موجود ہیں جنہیں متاثرین کو متبادل کے طور پر فراہم کیا جائے گا، اسی طرح  ایمپریس مارکیٹ کےمتاثرین کوشہاب الدین مارکیٹ میں جگہ دی جائے گی البتہ جن لوگوں نے سرکاری زمین پر تجاوزات قائم کیں انہیں کوئی متبادل نہیں ملے گا‘۔